پنجاب کابینہ میں ‘خفیہ’ توسیع پر عمران خان ‘پریشان’

ذرائع کے مطابق پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے بدھ کو اپنی پارٹی کے رہنماؤں پر سخت تنقید کی جب انہیں پنجاب کابینہ میں توسیع کے بارے میں معلوم ہوا.

خان نے اس پیشرفت سے مکمل لاعلمی کا اظہار کیا کہ ان کی پارٹی کے رہنما خیال کاسترو نے وزیر اعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی کی زیر نگرانی ایک تقریب میں بطور وزیر حلف اٹھایا تھا۔

ذرائع نے مزید کہا کہ اس سلسلے میں صورتحال اس وقت پیدا ہوئی جب پی ٹی آئی کے ایک سینئر رہنما نے عمران خان کو شکایت درج کرائی، جس میں کاسترو کی پنجاب کابینہ میں شمولیت پر اعتراض اٹھایا گیا۔

ذرائع کے مطابق عمران خان سے بات کرتے ہوئے ناراض سینئر رہنما نے کہا کہ توسیع نہیں ہونی چاہیے تھی۔

خان نے اپنے ردعمل میں کہا کہ انہیں کاسترو کے وزیر بننے کا علم نہیں تھا۔
اس موقع پر انہوں نے نئے صوبائی وزیر سے بات کرتے ہوئے کہا، “میں نے سوچا کہ آپ کو سربراہی کے لیے محکمہ دیا جا رہا ہے۔”

ذرائع کے مطابق پی ٹی آئی سربراہ نے کاسترو کو بتایا کہ اگرچہ یہ پیشرفت کوئی بڑا مسئلہ نہیں ہے لیکن اس سے پارٹی کے بیانیے کو نقصان پہنچا ہے۔

واضح رہے کہ صوبے کی کابینہ میں توسیع – خاص طور پر خان کی زیرقیادت پارٹی سے ایک نئے وزیر کی تقرری کے ساتھ – ایک ایسے وقت میں ہوئی ہے جب پی ٹی آئی مرکز پر مارچ کے آخر تک اسنیپ پولز کرانے کے لیے دباؤ ڈال رہی ہے۔ پارٹی حکومت کو دھمکی دیتی رہی ہے کہ اگر اپنی مرضی کی تاریخ پر انتخابات نہ کرائے گئے تو پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلیاں تحلیل کر دی جائیں گی۔

وفاقی وزیر نے جنرل (ر) باجوہ سے پرویز اور مونس کے دعوؤں کی وضاحت کرنے کی درخواست کر دی.

جنرل باجوہ نے پی ٹی آئی کو سپورٹ کرنے کا راستہ دکھایا: پرویز الٰہی نے مونس کے دعوے کی تصدیق کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

five × five =