وزیراعظم عمران خان کے ایچ بی او پر ایکسیوس کو انٹرویو

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ایک بار مسئلہ کشمیر حل ہو گیا تو ایٹمی خوف کی ضرورت نہیں رہے گی۔

 یہ بات انہوں نےایچ بی او پر صحافی جوناتھن سوان سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔”انٹلیجنس تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ پاکستان کے پاس دنیا میں سب سے تیز رفتار ہتھیار موجود ہیں۔ کیوں؟” انٹرویو لینے والے نے پوچھا۔

مجھے نہیں معلوم کہ وہ یہ سب کہاں سے لاے ہیں۔
انہوں نے کہا ، پاکستان کے جوہری ہتھیار محض ہمارے دفاع کے لئے ہیں، “انہوں نے مزید کہا کہ انہیں اس بات کا یقین نہیں تھا کہ وہ بڑھتا جارہا ہے یا نہیں۔” جہاں تک مجھے معلوم ہے ، یہ کوئی جارحانہ بات نہیں ہے۔ کوئی بھی ملک جس کا ہمسایہ کا سائز اس سے سات گنا ہے اسکے لئے پریشانی کا باعث ہوگا۔

وزیراعظم عمران خان نے مزید کہا کہ وہ “جوہری ہتھیاروں کے مکمل طور پر خلاف ہیں”۔ “میں ہمیشہ ہی رہا ہوں ۔ہم نے بھارت کے خلاف تین جنگیں لڑی ہیں اور جب سے ہمارے پاس ایٹمی روک تھام موجود ہے تب سے دونوں ملکوں کے مابین کوئی جنگ نہیں ہوئی ہے۔ ہمیں سرحدی تصادم کا سامنا ہے لیکن ہمیں کبھی بھی جنگ کا سامنا نہیں کرنا پڑا۔

یہ پوچھے جانے پر کہ وہ مغرب میں اسلامو فوبیا کے بارے میں اتنے واضح ہیں لیکن چین میں ایغور مسلمانوں کی نسل کشی کے بارے میں خاموش کیوں ہیں ، انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ “بند دروازوں کے پیچھے” بات چیت کی گئی ہے۔
“میں پوری دنیا کو دیکھتا ہوں کہ فلسطین ، لیبیا ، صومالیہ ، شام ، افغانستان میں کیا ہو رہا ہے۔ کیا میں ہر چیز کے بارے میں بات کرنے لگوں گا؟ میں اپنے ملک میں ، اپنی سرحد پر جو کچھ ہو رہا ہوں اس پر توجہ مرکوز رکهتا ہوں۔”
انہوں نے سوال کیا کہ جب مقبوضہ کشمیر کے عوام کو نظرانداز کیا جارہا تھا تو مغربی دنیا میں یہ اتنا بڑا مسئلہ کیوں تھا؟ وزیراعظم عمران خان نے کہا ، “یہ بہت زیادہ متعلقہ ہے۔ ایغوروں کے ساتھ جو کچھ ہو رہا ہے اس کے مقابلے میں ، ایک لاکھ کشمیریوں کو ہلاک کیا گیا ہے ،” انہوں نے مزید کہا کہ مقبوضہ وادی کو “کھلی جیل” میں تبدیل کردیا گیا ہے۔

انہوں نے پوچھا کہ یہ کوئی مسئلہ کیوں نہیں ہے؟ انہوں نے مزید کہا کہ یہ اسے “منافقت” سمجھتے ہیں۔
وہ ان چیزوں پر توجہ دے رہے ہیں جس سے ملک اور اس کی سرحدوں کی فکر ہے۔ انہوں نے کہا ، “ایک لاکھ کشمیری مر رہے ہیں ، جس سے مجھے زیادہ تشویش لاحق ہے  کیونکہ نصف کشمیر پاکستان میں ہے۔” وزیراعظم عمران خان نےکہا
وزیراعظم عمران خان نے اوپن لیٹر کے بارے میں بات کی جو انہوں نے مسلمان ریاستوں کے رہنماؤں کو لکھا تھا کہ وہ اسلام فوبیا کے خلاف متحد ہونے کا مطالبہ کرتے ہیں ، “اسلامی دنیا اور مغربی معاشروں کے مابین مواصلات کا ایک بہت بڑا فرق ہے۔ یہ نائن الیون کے بعد ہوا جب دنیا ‘ اسلامی ‘دہشت گردی کرنسی میں آگئی۔ “

افغانستان سے امریکی انخلا

صحافی نے پوچھا کہ آیا وہ افغانستان سے امریکی واپسی کے بارے میں خوش ہیں، پرائم منسٹر نے کہا: “ایک ہی طرح سے خوش ہوں کیونکہ افغانستان میں کبھی فوجی حل کار آمد نھیں ھوسکتا.”
مزید کہا کہ وہاں فکر مندوں کے احساسات بھی تھے. “سیاسی تصفیہ کے بغیر ایک سول وار کا امکان رہتا ہے.”

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ان کے نقطہ نظر میں، سیاسی حل طالبان اور افغان قیادت کے درمیان اتحادی حکومت ہے. “اور کوئی دوسرا حل ممکن نہیں۔

پوچھا گیا کے آیا امریکا نے افغانستان سے انخلاء کی تاریخ کا اعلان کر کے غلطی کی؟
وزیر اعظم نے کہا کہ: انہوں نے خود کو مسلے میں ڈال لیا ہے۔انہیں کچھ ٹائم فریم دینا چاہیے ٹھا۔لیکن جیسے ہے انہوں نے ٹائم فریم دیا طالبان نے اسے اپنی جیت تسلیم کیا۔
انہوں نے کہا کے جہاں تک پاکستان کا تعلق ہے، یہ افغانستان کے لوگوں کی نمائندگی کرے گا.

کیا آپ کو یہ تشویش نہیں ہے کہ لوگوں کا یہ گروہ [طالبان] آپ کے آگے طاقت بن جاینگے؟ “سوان سے پوچھا.

عثمان تنظیم بٹ

ایم۔اے پولیٹیکل سائنس

کیا پاکستان FATF(ایف اے ٹی ایف) کی گرے لسٹ سے نکل جائے گا؟

مقدمہ (ایف آئی آر) درج کروانے کا نسخہ

اپنا تبصرہ بھیجیں

1 × 1 =