خالصتان ریفرنڈم مہم نے کینیڈا کی سیاست کو ہلا کر رکھ دیا۔

نومبر 2021 میں برطانیہ میں مضبوط لہر پیدا کرنے کے بعد، خالصتان ریفرنڈم ایک بین الاقوامی ایڈوکیسی گروپ سکھز فار جسٹس (SFJ) کی کمیونٹی کے زیر اہتمام اب کینیڈا کی سیاست میں ہلچل مچا رہی ہے جہاں راۓ شماری کے لیے 18 ستمبر کو ووٹنگ شروع ہونے جا رہی ہے۔

خالصتان ریفرنڈم مہم – جس میں سکھوں سے اس سوال کا جواب طلب کیا جاتا ہے کہ “کیا ہندوستان کے زیر انتظام پنجاب کو ایک آزاد ملک ہونا چاہیے؟” — جسں کی نئی دہلی، ہندوستانی میڈیا اور غیر مقیم ہندوستانیوں (NRIs) کی طرف سے شدید مخالفت کی ہے۔

ہندوستانی میڈیا اور این آر آئیز اپنی مخالفت کا اظہار کر رہے ہیں، ہندوستانی حکومت فعال طور پر خالصتان پر غیر سرکاری ریفرنڈم پر “دہشت گردی” کا لیبل لگا رہی ہے اور اس کے برابر قرار دے رہی ہے اور SFJ ریفرنڈم کی حامی کو متنازعہ غیر قانونی تنظیم کے طور پر قرار دے چکی ہے۔

جیسا کہ برطانیہ میں ہوا، اسی طرح کینیڈا میں خالصتان ریفرنڈم کی سرگرمیوں نے کینیڈا میں بھارت نواز دھڑوں کو مشتعل کیا ہے جو بھارتی حکومت کے موقف پر عمل کرتے ہوئے ریفرنڈم کو بھارت مخالف دہشت گردی قرار دے رہے ہیں اور کینیڈا سے سکھ علیحدگی پسند سرگرمیوں پر پابندی لگانا چاہتے ہیں۔ اس حقیقت کے باوجود کہ کینیڈین چارٹر آف فریڈمز اینڈ رائٹس تمام سیاسی آراء کے عدم تشدد کے اظہار کی حفاظت کرتا ہے جس میں ریفرنڈم کے ذریعے علیحدگی کا مطالبہ بھی شامل ہے۔

31 اکتوبر 2021 کو لندن، یو کے سے شروع ہونے والے خالصتان ریفرنڈم میں اب تک برطانیہ، سوئٹزرلینڈ اور اٹلی کے کئی قصبوں میں ووٹنگ ہو چکی ہے اور تقریباً 450,000 سکھوں نے اپنا ووٹ ڈالا ہے۔

پنجاب ریفرنڈم کمیشن (PRC)، ریفرنڈم اور براہ راست جمہوریت پر غیر منسلک ماہرین کا ایک پینل، ووٹنگ کے طریقہ کار کی نگرانی کر رہا ہے تاکہ بیلٹنگ کے بین الاقوامی معیارات کی شفافیت اور تعمیل کو یقینی بنایا جا سکے۔

سدھو موسے والا کا آخری گانا یوٹیوب سے ہٹا دیا گیا: اصل وجہ جانیے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

18 + 5 =