کسٹم افسران کو کرپشن پر تادیبی کارروائی سے نوازا گیا۔

کسٹم افسران کو کرپشن پر تادیبی کارروائی سے نوازا گیا۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو نے سمگل شدہ سامان کی وصولی کی جگہ اور تاریخ کی غلط اطلاع دینے اور سمگلنگ میں استعمال ہونے والی گاڑیوں کو جان بوجھ کر چھپانے پر ایک اہلکار کو ملازمت سے ہٹا دیا ہے۔ اس نے سامان کے مالک سے غیر قانونی تسکین کے لیے براہ راست سودا کیا۔ دو دیگر افسران کو بھی اسی معاملے میں غلط رپورٹنگ کرنے پر معمولی سزائیں دی گئیں۔

ایف بی آر کی جانب سے جاری نوٹیفکیشن کے مطابق کلکٹریٹ آف کسٹم انفورسمنٹ لاہور کے انسپکٹر عمران فرید پر سمگل شدہ سامان لے جانے والی گاڑیوں کی حراست کو جان بوجھ کر چھپانے کا الزام عائد کیا گیا۔ اس پر سامان کی بازیابی کی جگہ کی غلط اطلاع دینے اور حراست کی تاریخ (17 نومبر 2021 کی بجائے 19 نومبر 2021) کو غلط بیان کرنے کا بھی الزام لگایا گیا تھا۔

ایف بی آر کے مطابق، فرید روکی جانے والی ہر گاڑی کے لیے الگ الگ انسپکشن رپورٹس جمع کرانے میں ناکام رہا۔ یہ اسے سامان کے مالک کے ساتھ غیر قانونی تسکین کے لیے براہ راست سودے بازی کا بھی قصوروار ٹھہراتا ہے۔ جس کے نتیجے میں ایف بی آر نے فرید کو ملازمت سے برطرف کر دیا ہے۔

حکام نے مذکورہ کیس میں دو دیگر افسران — انسپکٹر محمد سعید صابر اور سپرنٹنڈنٹ ناصر زمان رائکا — کو بھی معمولی سزائیں سنائی ہیں۔

صابر نہ صرف اپنے سینئر سپروائزری افسران کو آگاہ کرنے میں ناکام رہا بلکہ اس نے اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر کیس کے حقائق اور اعداد و شمار کو غلط رپورٹ کرنے کا کام بھی کیا، جیسا کہ ایف بی آر نے نوٹ کیا ہے۔ نتائج کے مطابق، زمان نے کیس کے اہم حقائق کو چھپانے کی بھی کوشش کی تھی، جس کے نتیجے میں دونوں افسران کی گزشتہ تین سالوں سے تنخواہوں میں کٹوتی کی گئی تھی۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کو ممنوعہ فنڈز موصول ہوئے.

اپنا تبصرہ بھیجیں

1 + 18 =