کیا پاکستان FATF(ایف اے ٹی ایف) کی گرے لسٹ سے نکل جائے گا؟

ممکن ہے کہ ایف اے ٹی ایف کے آئندہ ریویو اجلاس میں پاکستان کو امریکی تعاون حاصل نہ ہو۔

فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) انٹرنیشنل کوآپریشن ریویو گروپ (آئی سی آر جی) نے 27 نکاتی ایکشن پلان پر پاکستان کی پیشرفت سے متعلق اپنی ابتدائی رپورٹ کو حتمی شکل دے دی ہے۔یہ کمیٹی کے اگلے مکمل اجلاس میں پیش کی جائے گی جو 21 س
ے 25 جون تک ہوگا۔

گذشتہ ہفتے آئی سی آر جی کے مبصر گروپ کے اجلاس میں پاکستان کی کارکردگی کا جائزہ لیا گی
ا ، جس میں یو ایس اے ، چین، فرانس ، اور ہندوستان شامل تھے۔

ایف اے ٹی ایف
پاکستان کو جون 2018 میں ایف اے ٹی ایف کی گرے لسٹ میں شامل گیا تھا۔ ملک کو 2019 کے آخر تک منی
لانڈرنگ اور دہشت گردی کی مالی اعانت میں کمی لانے کے لئے 27 نکاتی ایکشن پلان دیا گیا تھا۔ تاہم ، آخری
تاریخ میں گذشتہ دو
سالوں میں بار بار توسیع کی گئی ہے۔

فروری کے آخری سیشن میں، ایف اے ٹی ایف نے آخری تاریخ جون تک بڑھا دی اور ملک کو گرے لسٹ میں رکھن
ے کا فیصلہ کیا۔
پاکستان مزید نگرانی میں ہے، “ایف اے ٹی ایف کے صدر ڈاکٹر مارک پلیئر نے فروری میں ایک پریس بریفنگ میں کہا ،
جبکہ پاکستان نے اہم پیشرفت کی ہے ، لیکن دہشت گردی کی مالی اعانت کو بڑھانے کے طریقہ کار میں کچھ سنجیدہ خامیاں
باقی ہیں۔پاکستانی حکومت کا خیال ہے کہ اس نے گذشتہ چند مہینوں کے دوران ان دونوں امور میں نمایاں پیشرفت کی ہ
ے اور امید ہے کہ آئندہ جائزہ اجلاس میں گرے لسٹ سے باہر آجائے گا۔
“یقین کی بات پر جزوی پیشرفت ہو رہی ہے۔ اس ضمن میں متعلقہ قوانین میں ترمیم کی گئی ہے۔ لہذا ، امید ہے کہ
21 جون سے شروع ہونے والے ایف اے ٹی ایف کے مکمل اجلاس میں پاکستان کے لئے خوشخبری ہوگی۔
ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ آیا پاکستان نے اپنی سفارت کاری میں خامیوں کو پلگ کرنے میں کافی پیشرفت کی ہے
تا کہ آئندہ اجلاس میں اس معاملے میں امریکی حمایت حاصل کر سکے۔ اس یقین کی وجہ ہے کہ مستقبل قریب میں اسلام
آباد کو ایف اے ٹی ایف میں واشنگٹن سے کوئی مہلت ملے گی۔

ٍا اگلا جائزہ اجلاس اس قیاس آرائیوں کے درمیان آ رہا ہے کہ جب امریکہ پاکستان
سے ناخوش ہے کیونکے امریکی فوجیوں کے افغانستان سے نکلنے کے بعد پاکستان اپنی سرزمین پر امریکی فوجی اڈوں کی
اجازت نہیں دے رہا ۔
دوسری طرف، ہارڈ پاور سے معاشی طاقت تک کے حصول کے لئے اپنی نام نہاد نئی پالیسی کے لئے امریکی منظوری
حاصل کرنے کے لئے پاکستان کا زور واشنگٹن میں کوئی لینے والا نہیں مل رہا۔
دو طرفہ تعلقات میں مزید معاشی قدر میں اضافہ کرکے امریکہ کے ساتھ اس کی شراکت میں تنوع پیدا کرنے کی امیدیں کہیں
بھی جاتی دکھائی نہیں دیتی ہیں۔

اس بات کا امکان نہیں ہے کہ ایف اے ٹی ایف صرف کارکردگی کی بنیاد پر پاکستان کو گرے لسٹ سے نکال دے

اس سلسلے میں اسلام آباد کو ایک مشکل صورتحال کا سامنا ہے. پاکستان امریکا کو
فوجی اڈوں پیش کرنا چاہے بھی تو اسے خطے میں اتحادیوں خاص طور پر چین کے غصہ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے.
چین پاکستان کو امریکہ کی میزبانی کرتے دیکھنا نہیں چاہتا کیونکہ اس کے نتیجے میں آپریٹنگ ڈرونوں کی وجہ سے چین
کی علاقایٔ سرحدوں کا تقدٌس پامال ھوگا.
اسی طرح، طالبان بھی افغانستان کے پڑوس میں کسی بھی فوجی اڈے کا قیام نہیں چاہتے

افغانستان سے امریکہ کی واپسی نے پاکستان کی پیچیدگیوں میں اضافہ کر دیا ہے،
اس کے ایف اے ٹی ایف کے کیس پر اثر پڑے گا. اب تک، پاکستان کے توجہ آنے والے ابتدائی سیشن میں
اپنی بہترین کارکردگی کو فروغ دینے کے لئے ہو گی. ممکن ہے کہ ہم ملک کو ایک اور ڈیڈ لائن ملتی دیکھیں گے

دنیا کے سب سے زیادہ عرصے تک زندہ رہنے والے لوگ کیا کھاتے اور پیتے ہیں؟(حصہ اول)

ایک چرواہے کی انوکھی داستان

اپنا تبصرہ بھیجیں

eight + 11 =