امریکی کانگریس نے پاکستان کے ساتھ 450 ملین ڈالر کی F-16 مینٹیننس ڈیل کی منظوری دے دی۔

امریکی کانگریس نے پاکستان کے ساتھ 450 ملین ڈالر کے F-16 کے پائیدار معاہدے کی منظوری دے دی ہے جس میں دیکھ بھال اور دیگر متعلقہ آلات کی فراہمی شامل ہے۔

یہ پیش رفت امریکی محکمہ خارجہ کی جانب سے گزشتہ ماہ مذکورہ آلات کی فروخت کی اجازت کے بعد سامنے آئی ہے۔

اس سے قبل، امریکی وزیر خارجہ، انٹونی بلنکن نے واضح کیا تھا کہ اس معاہدے کا مقصد صرف پاکستان کے موجودہ F-16 پروگرام کو برقرار رکھنا ہے جب کہ نئی دہلی نے اس معاہدے پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا تھا۔

انہوں نے یہ ریمارکس ستمبر میں واشنگٹن ڈی سی میں اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ میں ہندوستان کے وزیر خارجہ ڈاکٹر سبرامنیم جے شنکر کے ساتھ ایک پریس کانفرنس میں کہے۔

انہوں نے تفصیل سے بتایا کہ اس میں کوئی نیا طیارہ، نظام یا گولہ بارود شامل نہیں ہے، اور وضاحت کی کہ پاکستان کو درپیش دہشت گردی کے خطرات کے پیش نظر یہ صرف F-16 طیاروں کو برقرار رکھنے کے لیے ہے۔

مزید برآں، انہوں نے ریمارکس دیے کہ ایسے خطرات کو استثنیٰ کے ساتھ برقرار رکھنے کی اجازت دینا کسی کے بھی مفاد میں نہیں ہے، اور مزید کہا کہ امریکہ ہمیشہ ان فوجی ساز و سامان کے لیے پائیداری پیکجز پیش کرتا ہے جو وہ دوسری ریاستوں کو فروخت کرتا/فراہم کرتا ہے۔

اس کے علاوہ انہوں نے پاکستان اور بھارت دونوں پر زور دیا کہ وہ اپنے دوطرفہ مسائل کو مناسب سفارتی ذرائع سے حل کریں۔

آرمی چیف کی امریکا سے پاکستان کو آئی ایم ایف فنڈز کے اجراء میں تیزی لانے کی اپیل.

اپنا تبصرہ بھیجیں

12 + twenty =