آرمی چیف کے عہدے کے لیے کوئی ذاتی پسندیدگی نہیں تھی، عمران خان

آرمی چیف کے عہدے کے لیے کوئی ذاتی پسندیدگی نہیں تھی، عمران خان

سابق وزیر اعظم نے اسلام آباد میں پی ٹی آئی کی حکومت کی تبدیلی کی سازش کے حوالے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ (ن) کے رہنما خرم دستگیر نے حال ہی میں کہا تھا کہ وہ نومبر 2022 میں اپنے پسندیدہ جنرل کو پاکستان کا آرمی چیف منتخب کرنے والے ہیں اور ان کے پاس بغیر مداخلت کے ملک میں حکمرانی کے لیے 15 سالہ منصوبے ہیں۔ لیکن اس کے پاس ایسا کوئی منصوبہ نہیں تھا۔

“نواز شریف جیسے لوگ ایسے عہدوں کے لیے پسندیدہ لوگوں کو چننے کی کوشش کرتے ہیں کیونکہ انہیں اپنی کمائی ہوئی دولت بچانا ہوتی ہے، میں نے تو کبھی شوکت خانم ہسپتال کو بھی اپنے حکم پر کسی شخص کو تعینات کرنے پر مجبور نہیں کیا، میں بطور وزیر اعظم ایسا کیسے کر سکتا ہوں،” عمران خان نے کہا۔

ان کا خیال تھا کہ وہ میرٹ پر پختہ یقین رکھتے ہیں اور محسوس کرتے ہیں کہ میرٹ کے خلاف تقرریاں اداروں کو تباہ کرتی ہیں۔ موجودہ مخلوط حکومت پر گہری تنقید کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ انہوں نے سیاست میں آنے کے فوراً بعد ان کے اتحاد کے بارے میں پیش گوئی کی تھی کیونکہ وہ جانتے تھے کہ یہ سب کرپٹ ہیں اور جس دن وہ اقتدار میں آئیں گے وہ (ن لیگ اور پیپلز پارٹی) ان کے خلاف متحد ہو جائیں گے۔ . سابق وزیر اعظم نے مزید کہا کہ وہ ان دونوں جماعتوں کے خلاف (whistle blowing) کرتے رہے ہیں۔

اس بارے میں بات کرتے ہوئے کہ امریکہ عالمی سطح پر حکومت کی تبدیلی کیوں لاتا ہے، انہوں نے کہا کہ امریکہ اس ملک کی بہتری نہیں چاہتا بلکہ ان کے مفادات کا تحفظ چاہتا ہے۔ کیا یہ ہمارے مفاد میں ہے کہ ہم امریکہ کو اپنے فوجی اڈے فراہم کریں؟ خان نے سوال کیا.

انہوں نے مزید کہا کہ ہم سب جانتے ہیں کہ دہشت گردی کے خلاف امریکا کی جنگ میں ہمارا استحصال ہوا، ہمارے صدر کو امریکا نے خبردار کیا تھا کہ اگر ہم نے عمل نہ کیا تو ہم آپ بمباری کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ قبائلی علاقوں میں فوج بھیجنا ایک غلطی تھی، قبائلی علاقے وہ علاقے تھے جہاں انگریزوں کو سب سے زیادہ جانی نقصان اٹھانا پڑا۔

جو بھی کارروائیوں کے خلاف بولا اسے دہشت گرد قرار دیا گیا، انہوں نے ایک سابق آرمی جنرل کے حوالے سے کہا کہ امریکہ نے جان بوجھ کر طالبان کے ساتھ ہمارے امن معاہدے کو سبوتاژ کیا، امن معاہدے کے حوالے سے ایک سینئر امریکی اہلکارنے کہا”ہم آپ کو لڑائی کے لیے پیسے دے رہے ہیں، امن معاہدے کرنے کے لیے نہیں۔

کیا امریکہ نے کبھی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے تعاون کی تعریف کی؟ خان نےسوال کیا، مزید کہا کہ میرا (Absolutely Not) کہنا میرے لوگوں کے مفاد میں تھا۔

میں امریکہ کےمخالف نہیں ہوں، میں امریکہ کے ساتھ اچھے تعلقات چاہتا ہوں، لیکن میں انہیں ‘ٹشو پیپرز’ کی طرح ہمیں استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے سکتا۔ امریکہ چاہتا ہے کہ ہم اسرائیل کو تسلیم کریں اور کشمیر کی بات نہ کریں تاکہ ہندوستان مضبوط ہو، اور چین کی طاقت کو کم کر سکے۔

مہنگائی کے خلاف احتجاج: عمران خان آج پی ٹی آئی کی آئندہ کی حکمت عملی کا اعلان کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

11 − 7 =