پاکستان میں پہلی بار ٹرانس جینڈر کو ایم بی بی ایس کی ڈگری مل گیٔ۔

سارہ گل پاکستان کی پہلی ٹرانس جینڈر ڈاکٹر بن گئی ہیں۔
Sarah Gul Transgender doctor

پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار کراچی سے تعلق رکھنے والے خواجہ سرا کو بیچلر آف میڈیسن اور بیچلر آف سرجری (ایم بی بی ایس) کی ڈگری سے نوازا گیا۔

سارہ گل نامی ایک خواجہ سرا نے ملک کی پہلی ٹرانس جینڈر ڈاکٹر بن کر تاریخ رقم کی۔ اس نے کراچی کے جناح میڈیکل اینڈ ڈینٹل کالج سے ایم بی بی ایس کا فائنل پروفیشنل امتحان پاس کیا۔

میڈیا سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے سارہ گل نے کہا کہ مجھے پاکستان کی پہلی [ٹرانس جینڈر] ڈاکٹر ہونے پر فخر ہے۔

اپنے مستقبل کے لائحہ عمل کا انکشاف کرتے ہوئے گل نے کہا کہ وہ اپنی کمیونٹی کی فلاح و بہبود کے لیے کام کریں گی۔

پچھلے سال جولائی میں، ملتان میں ان کے لیے خصوصی انسٹی ٹیوٹ کھولے جانے کے بعد خواجہ سراؤں نے سکول میں پہلی مرتبہ شرکت کی تھی۔

18 کے قریب خواجہ سراؤں نے اس سکول میں داخلہ لیا تھا جو ان کی کمیونٹی کے طلباء کے لیے خوش آئین عمل ہے۔

گورنمنٹ کمپری ہینسو سکول فار گرلز کا افتتاح سیکرٹری سکول جنوبی پنجاب احتشام انور نے کیا۔

انور نے اس وقت کہا تھا کہ ڈیرہ غازی خان اور بہاولپور میں بھی ٹرانس کمیونٹی کے لیے اسکول شروع کیے جائیں گے۔

ملتان کا سکول نرسری سے انٹرمیڈیٹ تک کی کلاسز پیش کرتا ہے اور خاص طور پر خواجہ سرا کمیونٹی کی تعلیم کے فرائض کو پورا کرتا ہے۔

بُلی بائی: ہندوستان میں مسلم خواتین کو فروخت کرنے والی ایپ بند کر دی گئی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں

5 × five =