شارجہ :عمران نذیر اور عبدالرحمان کی جارحانہ بیٹنگ کی بدولت پاکستان کی ایک اور جیت.

شارجہ :عمران نذیر اور عبدالرحمان کی جارحانہ بیٹنگ کی بدولت پاکستان کی ایک اور جیت.
یو اے ای میں جاری دوستی کپ کے فائنل میں پاکستان لیجنڈز نے ورلڈ لیجنڈز کو شکست دے کر ٹرافی اپنے نام کی تو ٹورنامنٹ میں پاکستانی ٹیم کے کپتان عمران نذیر کی جارحانہ بیٹنگ کا تذکرہ دیگر موضوعات پر حاوی رہا۔

فائنل سے قبل ٹورنامنٹ کے ایک میچ کے دوران عمران نذیر نے 23 گیندوں پر 56 رنز کی اننگز کھیلی اور اس میں پانچ چھکے لگائے تو دیکھنے والے انٹرنیشنل کرکٹ میں ان کا سابقہ دور یاد کیے بغیر رہ نہ سکے۔پاکستانی ٹیم کا حصہ رہنے والے عمران نذیر انجری کے باعث قومی ٹیم سے باہر ہوئے تو پانچ برس تک کرکٹ نہیں کھیل سکے تھے۔

اپنی انجری کا ذکر کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ طبیعت کی خرابی کی وجہ سے کرکٹ کھیل نہیں سکا تو ٹیلی ویژن پر بھی کھیل نہیں دیکھ سکاکیونکہ دوسروں کو کھیلتا دیکھ کر اپنی بےبسی کا احساس زیادہ تکلیف دہ ہوتا تھا۔

پاکستان لیجنڈز میں کپتان عمران نذیر سمیت عبدالرحمان، عبدالرؤف خان، نوید لطیف، یاسر حمید، توفیق عمر، بلاول بھٹی، محمد عرفان، محمد سمیع، عدنان اکمل اور سلمان بٹ شامل تھے جبکہ ورلڈ لیجنڈز کی ٹیم میں افغان کرکٹر اشغر افغان،سری لنکن کھلاڑی تلکارتنے دلشان، فل مسٹرڈ اور چمارا کپوگیدرا شامل تھے۔

چار ٹیموں کے درمیان کھیلے گئے ٹورنامنٹ میں پاکستان، انڈیا، بولی وڈ اور ورلڈ لیجنڈز کی ٹیمیں شامل تھیں۔

ٹورنامنٹ میں شریک انڈین ٹیم کی قیادت سابق کپتان اظہرالدین نے کی۔

شارجہ کرکٹ سٹیڈیم میں ہونے والے فائنل میچ میں بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ اوورز میں 133رنز بنائے۔سلمان بٹ نے بہترین بیٹنگ کرتے ہوئے20گیندوں پر 45رنز جبکہ محمد سمیع نے صرف 10گیندوں پر 36رنز بنائے۔

جواب میں ورلڈ الیون کی ٹیم مقررہ اوورز میں 119رنز بناسکی۔اس طرح پاکستان لیجنڈ نے یہ میچ 14رنز سے جیت لیا۔ اس کپ کی اختتامی تقریب میں انڈین ٹیم کے سابق کپتان ایم ایس دھونی بھی شریک ہوئے۔

آج تاریخی دن ہے‘وزیر اعظم خود میچ دیکھنے جائیں گے.

اپنا تبصرہ بھیجیں

eleven − three =