میٹابولزم کو تیز کرنے اور موثر بنانے والی غذائیں

metabolism

میٹابولزم کیا ہے؟

میٹابولزم جسم کا ایک ایسا نظام ہے جو کیلوریز جلانے کا ذمہ دار ہے۔ جس شرح سے ہمارا جسم کیلوریز جلاتا ہے اسے جسم کا میٹابولک ریٹ کہا جاتا ہے۔

کیا پوری کیلوریز کا جلنا ضروری ہے؟

سست میٹابولک ریٹ کی صورت میں ہمارا جسم پوری کیلوریز کو جلانے میں ناکام رہتا ہے جو ہم کھانے سے لیتے ہیں۔ جبکہ، تیز میٹابولک ریٹ جسم سے پوری کیلوریز کو جلانے میں مدد کرتا ہے۔ یاد رکھیں، کھانے سے حاصل ہونے والی اضافی کیلوریز چربی میں بدل جاتی ہیں۔

اس لیے ہمارے جسم کے لیے تمام کیلوریز کو جلانا انتہائی ضروری ہے۔

کیا سست میٹابولزم والے لوگ موٹاپے کا شکار ہو سکتے ہیں؟

یہی وجہ ہے کہ سست میٹابولک ریٹ والے لوگ موٹاپے کا شکار ہو جاتے ہیں۔ جبکہ تیز میٹابولک ریٹ والے افراد کا وزن زیادہ نہیں بڑھتا ۔

وہ کونسی غذائیں ہیں جو میٹابولزم کو بڑھانے میں مدد گار ثابت ہوتی ہیں؟

وہ غذائیں جو آپ کے میٹابولزم کو تیز اور مؤثر طریقے سے کام کروانے میں مدد گار ثابت ہوتی ہیں درج ذیل ہیں:-

ادرک

ادرک کو ہاضمے میں مدد کے طور پر استعمال کیا جاتا رہا ہے۔ معدے کو سکون بخشتا ہے اور ہاضمہ کی نالیوں میں سوزش کو کم کرتا ہے۔ یہ چاپلوسی، صحت مند نظر آنے والے پیٹ میں حصہ ڈال سکتا ہے۔

جب اسے کھایا جاتا ہے تو گرمی پیدا ہوتی ہے جسم کے اندرونی درجہ حرارت کو بڑھا کر اور اسے زیادہ جلنے پر مجبور کرکے میٹابولک ریٹ کو بھی بڑھاتا ہے۔ اپنی جڑ سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کے لیے اسٹر فرائی میں کاٹ لیں یا چائے کے طور پر پی لیں۔

سبز چائے

یہ میٹابولک نظام کو بہتر بنانے اور بڑھانے کا بھی ایک شاندار ذریعہ ہے۔ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ سبز چائے میں موجود مرکبات حیرت انگیز طور پر کام کرتے ہیں۔ یہ مرکبات ہاضمے کو بہتر بناتے ہیں اور ٹاکسن کو ختم کرتے ہیں جو میٹابولزم کو سست کرتے ہیں۔

سبز چائے میٹابولزم کو کیسے بڑھاتی ہے؟

سبز چائے میں پائے جانے والے اجزاء چربی جلانے کا وعدہ ہیں۔ لیبارٹری کے کچھ ماڈلز نے آپ کی چربی کے ذخیرے میں خون کی نالیوں کی نئی تشکیل میں کمی ظاہر کی ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ یہ آپ کی چربی سے اہم غذائیت چھین لیتا ہے اور اسے مرجاتا ہے۔

انڈے

کاربوہائیڈریٹ اور چربی بھی بڑھتے ہوئے میٹابولزم کے اچھے ذرائع ہیں۔ تاہم، پروٹین جسم کی میٹابولک شرح کو تیز کر سکتا ہے۔ کاربوہائیڈریٹ اور چکنائی سے بھی تیز۔ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ پروٹین پر مشتمل غذائیں میٹابولزم کو بڑھانے کے لیے بہترین آپشن ہیں۔

کیا انڈے پروٹین سے بھرپور ہوتے ہیں؟

اس لیے انڈے پروٹین کا بہترین ذریعہ ہیں۔ وہ پروٹین سے بھرپور ہیں اور کیلوریز میں کم ہیں۔ لہذا، کافی مقدار میں انڈوں کا کھاناا آپ کے میٹابولزم کو بڑھانے میں مدد کرتا ہے۔

کافی

کافی جسم کے میٹابولک ریٹ کو تیز کرنے کا بھی ایک بڑا سبب ہے۔ یہ صرف ایک سنی سنائی نہیں بلکہ ایک ثابت شدہ حقیقت ہے۔ کافی میں بہت سے محرکات ہوتے ہیں۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ اس میں کیفین ہوتی ہے جو آپ کے جسم کی میٹابولک رفتار کو تیز کرنے میں مدد کرتی ہے۔ صرف یہی نہیں بلکہ کیفین آپ کو زیادہ چوکس اورپھرتیلا بنانے کی صلاحیت بھی رکھتی ہے۔

گہرے پتوں والی، ہری سبزیاں

گہرے پتوں والی، ہری سبزیاں بھی آپ کے میٹابولزم کو تیز کرنے کا ایک اہم ذریعہ ہیں۔ اس سلسلے میں پالک اور بند گوبھی اس مقصد کے لیے بہترین ہیں۔ اس کا سہرا پالک اور بند گوبھی میں پائے جانے والے آئرن کو جاتا ہے۔ چونکہ میٹابولزم کو بڑھانے کے لیے آئرن ایک اہم معدنیات ہے۔ یہ (آئرن) جسم کی نشوونما کا بھی ایک اچھا ذریعہ ہے۔

اخروٹ

اخروٹ فائبر، وٹامنز، کاربوہائیڈریٹس اور آئرن سے بھرپور ہوتے ہیں۔ اور فائبر، وٹامنز اور کاربوہائیڈریٹس ہمارے جسم کے لیے مفید ہیں۔

بہر حال، اخروٹ کو دماغی صحت کو بہتر بنانے کا ایک مؤثر ذریعہ تو مانا جاتا ہے۔ تاہم، کچھ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ اخروٹ میٹابولک رفتار اور کارکردگی کو بڑھانے کا ایک لازمی ذریعہ بھی ہے۔

کیا اخروٹ اینٹی سوزش ہیں؟

مٹھی بھر اخروٹ کے استعمال سے سست رفتار میٹابولزم تیز ہو سکتا ہے۔ وہ حیرت انگیز حد تک اینٹی سوزش ہیں۔ اس کی وجہ سے ہمارے جسم کا میٹابولک نظام موثر اور تیزی سے کام کرتا ہے اور ہمارے جسم میں اضافی چکنائی پیدا نہیں ہونے دیتا۔

پھلیاں

پھلیاں بھی پروٹین کا ایک اچھا ذریعہ ہیں۔ پروٹین کے بلڈنگ بلاکس پٹھوں کی مجموعی کو بچانے میں مدد کر سکتے ہیں۔ اس کے نتیجے میں آپ کے جسم میں پائی جانے والی کیلوریز آرام کے وقت زیادہ جلتی ہیں۔ وہ غذائیں جو دبلے پتلے پٹھوں کو جمع کرتی ہیں یا محفوظ رکھتی ہیں میٹابولزم کے لیے موثر ہیں۔ لہذا، پھلیاں ان اقسام کے کھانوں میں سے ایک ہے.

کالی مرچ

پرانے زمانے میں، مسالہ دار کھانوں کو میٹابولزم کو بڑھانے کا اچھا ذریعہ نہیں سمجھا جاتا تھا۔ تاہم، حالیہ مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ مسالیدار کھانے سے چربی جلانے اور میٹابولزم کو بہتر بنانے میں مدد مل سکتی ہے۔

خاص طور پر کالی مرچ سب سے قابل اعتماد ذریعہ ہے جس کے استعمال سے ہمارا میٹابولک ریٹ تیزی سے کام کرتا ہے اور جسم میں موجود چربی کو جلا سکتا ہے۔

خلاصہ

خلاصہ میں یہ امر قابل ذکر ہے کہ میٹابولزم ہمارے جسم کا سب سے اہم نظام ہے۔ ایک موثر میٹابولک نظام جسم کی طرف سے جمع کی گئی کیلوریز کو جلانے میں ہماری بہت زیادہ مدد کرتا ہے۔

اگر ہمارا میٹابولک ریٹ سست ہو تو یہ ایک تشویشناک صورتحال ہے۔ کیونکہ یہ ہمارے جسم میں بڑی تعداد میں چربی کا باعث بن سکتا ہے۔ اس طرح یہ ہمیں موٹاپے کی طرف لے جاتا ہے جو کہ ایک سنگین تشویش کا باعث ہے۔

کیا ہمارے میٹابولزم کے لیے ضروری ہے کہ وہ تیز اور موثر طریقے سے کام کرے؟

اس کے علاوہ،سست میٹابولزم چربی کا سبب بنتا ہے جو مختلف خرابیوں کا باعث بن سکتی ہے .یہ صرف تیز رفتار اور موثر میٹابولک نظام کی صورت میں ممکن ہے۔ مذکورہ غذائیں میٹابولزم کو بہتر بنانے اور بڑھانے کے سب سے زیادہ تسلیم شدہ ذرائع ہیں۔

کیا پانی ایک موثر میٹابولزم بوسٹر ہے؟

اس کے علاوہ یہاں یہ بات بھی کہنا ضروری ہے کہ پانی کی کمی ہمارے جسم کا بدترین دشمن ہے۔ جیسا کہ یہ جسمانی افعال اور میٹابولزم کو سست کرتی ہے۔

بہت سے مطالعات نے ثابت کیا ہے کہ پانی جسم میں کیلوریز کو جلانے کا ایک بہترین طریقہ ہے۔ اس لیے دن بھر وافر مقدار میں پانی پینے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔

کیا ورزش کوئی کردار ادا کرتی ہے؟

آخری لیکن کم از کم، ورزش بھی ان ذرائع میں سے ایک ہے جو میٹابولک ریٹ کو بڑھانے میں مددگار ثابت ہوتی ہے۔ ورزش جسم کے میٹابولک نظام کو بڑی حد تک تیز کرتی ہے۔ اس طرح، جسم میں جمع شدہ کیلریز جل جاتی ہیں.

( بے وقت جلد کی دیکھ بھال) Timeless Skin Care

لمحہ موجود کی طاقت

اپنا تبصرہ بھیجیں